Advertisement

Francis Bacon Essay English // Urdu Summary


Of truth is Bacon's incredible work of composition which shows his sharp perception of people with their qualities of truth and untruth. To start with, he expresses that individuals for the most part could do without reality. 

Proceeding onward he portrays the reasons why individuals don't care for reality. In the first place, the fact of the matter is hard to secure without difficult work and man is ever hesitant to buckle down. In addition, truth makes individuals bound to a specific actuality. It reduces the opportunity. 

As indicated by Bacon truth resembles a splendid day which shows the genuine self. Truth resembles a pearl that shows what is noticeable to unaided eye. Individuals lie since it covers their genuine character. Bacon properly says that "A combination of an untruth doth at any point add joy." The combination of truth and falsehood makes things fascinating and satisfies everybody. 

Bacon contrasts lie and a snake creeping on its gut as opposed to strolling on its feet. The bogus individual needs to allow his head to down on the grounds that he feels remorseful all the time because of his propensity for talking lie constantly to acquire benefits in business. Bacon cites Montaigne who said that "a liar is a man who is courageous towards God yet is quitter towards men." 

Along these lines Bacon finishes up his paper with instruction by giving a hint of Christian ethical quality. The paper is wealthy in way and matter. This is a board, common and moral and ought to be perused gradually to comprehend the clear and dense exposition style of Bacon. 

Examine of Revenge 

Francis Bacons is against private vengeance . He says that vengeance is outside of law .Bacon brings up that disregarding an off-base makes a man better than the individual who submitted the primary wrong. Bacon calls attention to that savvy men have enough to do with the present and the future instead of rendering retribution. Since a wrong in the past can't be made right, it's ideal to focus on attempting to impact the present and future. 

Bacon adds that no man tries to do hurt for the wellbeing of its own and that getting frantic at somebody attempting to better himself isn't awesome. On the off chance that a man hurts since he's simply terrible, indeed, that is his temperament, and his evil nature directs his activities. 

Assuming, Bacon contends, one takes part in retribution that has no legitimate cure, that vengeance may be decent, however he cautions that the individual looking for vengeance should ensure there is no law that will rebuff him. Furthermore, it's just correct that the individual one is looking for retribution upon comprehends that he's the objective since that information may make him sorry for his unique activity. 

Bacon closes the paper calling attention to that open vengeance on terrible pioneers is "generally lucky" however reminds his peruse that private retribution is "grievous." 

Marriage and single. 

Sir Francis Bacon investigates the topics of autonomy, freedom, and marriage, all through his paper "Of Marriage and Single Life." Bacon inspects the positives and negatives appended to being single and hitched. Bacon remarks on the freedom that being single gives people who wish to live liberated from the restrictions and obligations of marriage. He additionally specifies that solitary men have the opportunity and cash to reward society charitably. Bacon accepts that solitary men are frequently "closest companions, best experts, best workers." However, Bacon additionally composes that being single can make a man "coldblooded and pitiless" on the grounds that he detests the delicacy and love that wedded men regularly experience. 

Bacon continues to clarify that he accepts that solitary moderately aged men ought to get hitched at the perfect time and examines why spouses decide to wed terrible husbands. Bacon perceives that autonomy gives single men freedom which gives them the chance and money to help society, however can likewise make them insensitive in specific circumstances. He likewise investigates the positives and negatives of being hitched all through the article. 

Of Friendship 

Bacon builds up the significance of companionship by suggestion when he says "at all is gotten a kick out of isolation is either a wild monster or a divine being." He develops this subject in the very section by saying that, without companions, the "world is nevertheless a wild." Bacon's paper is focused on what he calls the "product of kinship," of which there are three, and the first is the capacity to dispose of every one of one's dissatisfactions by having a genuine companion to tune in. Bacon lived in a period when men accepted that our bodies were constrained by "humors" earth, air, fire and water and if the humors got unequal in our bodies, we became ill. Bacon compares the equilibrium of humors in the body to adjust in the brain, and one reestablishes harmony to the psyche by unburdening on self to a companion. 

The following part of the exposition is a meaningful conversation of companionships and bombed kinships in traditional Roman history, and afterward Bacon expresses the "second product of fellowship," which is the aftereffect of talking about one's issues with a thoughtful companions, and during the time spent "imparting and talking with another," one really becomes "more astute than himself." But, the subsequent organic product has another a large portion of that is similarly as significant, and that is counsel from the companion, which, as per Bacon, is "drier and cleaner" than the advice that comes from inside oneself. Bacon looks at the third product of companionship to a pomegranate, which many parts. Bacon contends that there are numerous things a man can't accomplish for himself- - acclaim himself (unobtrusively), request assist that a companion with canning him with no shame. These are among the numerous parts of fellowship epitomized in the third natural product.

Examine of Love 

Frances Bacon's paper "Of Love" subtleties questions and answers in regards to the exceptionally muddled idea of adoration. The article starts by contrasting affection with the stage. As indicated by Bacon, love reflects the stage since it is loaded up with parody, misfortune, naughtiness, and fierceness. Like the plays delivered on the stage, love is multidimensional 

Bacon proceeds to express that adoration makes individuals act in altogether different manners. Individuals, devoured by affection, will wind up loaded up with "extraordinary spirits" and "frail passion(s)." 

Maybe the most provocative explanation that Bacon makes in the paper is "That it is difficult to adore, and to be shrewd." This could constrain one to believe that to be enamored makes them moronic. 

Bacon proceeds to introduce the various parts of adoration. There is in man's tendency, a mysterious tendency and movement, towards adoration for other people. Here, Bacon promptly concedes that affection has a force which no man can handle. Despite the will to give love, love will, itself, spread out among people around him. 

Examine of Parents and youngsters 

A wide range of feelings and sensations of guardians for their youngsters, regardless of whether it is delight, distress, or dread, are private and individual that they don't impart to other people. Having kids make it simpler for the guardians to endure the hard work that will profit their kids and guarantees their prosperous future. Notwithstanding, for the guardians, it is difficult to endure the difficulties since they feel that these difficulties or disasters will thwart their kids' prosperity. 

It is here and there saw that guardians don't treat their all youngsters with an equivalent fondness; they separate between them which isn't liked, particularly for the sake of the mother. Bacon heated this contention with a citation from Salomon that if a child accomplishes something appreciating, he is father's child however in the event that a child accomplishes something despicable, he is mother's child. It is the obligation of the guardians to pick a correct calling for their kids straightaway. Nonetheless, if a youngster develops and shows interest in a very surprising calling, the guardians shouldn't force their determination on them. They ought to permit them to head out in a different direction. 

More youthful youngsters are for the most part lucky since they get a solid inspiration for the difficult work by their senior siblings. In any case, the inspiration to difficult work decays where the senior sibling is excluded and the little youngster desires to get all the recipient of abundance from guardians. 

Talk about of Studies 

Featuring the significance of studies, Bacon's paper delineates the job considers play in a person's day by day life. For Bacon, the examination is constantly identified with the utilization of information in viable life. Toward the start of his article, Bacon portrays the three principle reasons for study including reading for acquiring delight, reads accomplished for ornamenting one's life and concentrating to improve one's capacity. 

The writer is the thought that solitary learned and all around read men can execute designs viably, deal with their day by day undertakings with skill and lead a solid and stable life. He further expresses that perusing makes a full man; meeting prompts a prepared man while composing makes a definite man. Bacon likewise advances a few bad marks of study as he feels that reading for a delayed timeframe may prompt lethargy. 

He likewise denounces the demonstration of concentrating from books exclusively without gaining from nature around. The paper Of Studies further affirms the advantages of studies by thinking about this go about as a medication for the imperfections of human brain and the wellspring of improving one's mind. While examining the significance of concentrating in a person's life, the writer educates his peruses about the advantages regarding perusing great books. 

For Bacon, a few books are just intended to be tasted; others are there to swallow while a few books are intended for biting and processing appropriately. Consequently, the peruses should pick shrewdly prior to concentrating any book to improve his/her insight about the world around. Bacon closes his paper by proposing that reviews help a person in eliminating the imperfections of his/her brain as each issue of the human psyche conveys uncommon significance for the individual and the world. 

Examine of Youth and age 

In this exposition Bacon attempts to analyze the attributes youthful and mature age. In the beginning of the paper Bacon makes reference to that it is feasible for a young fellow to have the development of that of an elderly person, however says that it is an uncommon case. He thinks about youth to the main thoughts or contemplations and says that they are never pretty much as astute as the seconds. However, on the other hand, the new creations or revelations of the adolescent appear to be more reviving than those of the matured ones as their creative mind are better. 

Despite the fact that the young are loaded with wants and aspirations they are not sufficiently developed to follow up on those cravings until they are of a specific age. He says that both youthful just as matured have characteristics that are one of a kind, for example, Young men are smarter to design, elderly people men better to pass judgment, Young men are better in doing, elderly people men in ascertaining hazards, Young men are better for new activities, elderly people men for settled business. 

Youngsters, he says, are brimming with energy and novel thoughts, never stay calm, are up to make a change and are inventive in nature. Regardless of whether their endeavors bomb they don't stagger, they continue to go until they get the outcome they are searching for. They resemble a flimsy pony he says, which doesn't stop or turn. While matured men are very inverse, they think and counsel excessively, and are too consistent to possibly be courageous and toward the end are content with the base pace of progress that they accomplish. He says that the youthful have dreams though the matured have dreams which are not as sound contrasted with the previous. He says that there are some who think past their age yet it decreases alongside their age, who have preferred elegance in youth over in age.

Urdu Summary

سچ تو یہ ہے کہ بیکن کا نثر کا زبردست کام ہے جو انسانوں کے سچائی اور جھوٹ کی ان کی خصوصیات کے ساتھ اس کے گہری مشاہدے کو ظاہر کرتا ہے۔ شروع میں ، انہوں نے کہا کہ عام طور پر لوگ حق کی پرواہ نہیں کرتے ہیں۔ اس پر چلتے ہوئے وہ وجوہات بیان کرتے ہیں جو لوگوں کو حقیقت پسند نہیں کرتے ہیں۔ سب سے پہلے ، سچائی کو بغیر محنت کے حاصل کرنا مشکل ہے اور انسان ہمیشہ سخت محنت کرنے سے گریزاں ہے۔ مزید یہ کہ ، سچ لوگوں کو ایک خاص حقیقت کا پابند بنا دیتا ہے۔ اس سے آزادی کم ہوتی ہے۔
   بیکن کے مطابق سچائی ایک روشن دن کی طرح ہے جو حقیقی خود کو ظاہر کرتا ہے۔ سچائی ایک موتی کی طرح ہے جو ظاہر کرتی ہے کہ ننگی آنکھوں کو کیا نظر آتا ہے۔ لوگ جھوٹ بولتے ہیں کیونکہ اس میں ان کی اصل شخصیت شامل ہوتی ہے۔ بیکن نے بجا طور پر کہا ہے کہ "جھوٹ کا مرکب خوشی میں اضافہ کرتا ہے۔" سچ اور جھوٹ کا مرکب چیزوں کو دلچسپ بنا دیتا ہے اور ہر ایک کو خوش کرتا ہے۔ بیکن کا موازنہ اس کے پاؤں پر چلنے کے بجائے اس کے پیٹ پر رینگنے والے سانپ سے ہے۔ جھوٹے شخص کو اپنا سر نیچے چھوڑنا پڑتا ہے کیونکہ وہ کاروبار میں فوائد حاصل کرنے کے لئے ہر وقت جھوٹ بولنے کی عادت کی وجہ سے ہر وقت مجرم محسوس کرتا ہے۔ بیکن نے مونٹائگن کے حوالے سے کہا ہے کہ "جھوٹا آدمی ہے جو خدا کا بہادر ہے لیکن مردوں کے لئے بزدل ہے۔"
لہذا بیکن نے مسیحی اخلاقیات کو ہوا دے کر تخلص پسندی کے ساتھ اپنے مضمون کا اختتام کیا۔ مضمون مضامین اور معاملہ سے مالا مال ہے۔ یہ ایک کونسل ، سول اور اخلاقی ہے اور بیکن کے خوبصورت اور گاڑھا ہوا گدی انداز کو سمجھنے کے لئے اسے آہستہ آہستہ پڑھنا چاہئے۔

بدلہ لینے کا معائنہ کریں

فرانسس بیکن نجی انتقام کے خلاف ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ انتقام قانون سے باہر ہے۔ بیکن نے بتایا کہ کسی کو غلط نظرانداز کرنا انسان کو اس شخص سے برتر بنا دیتا ہے جس نے پہلا غلط کام کیا۔ بیکن نے اس بات کی نشاندہی کی ہے کہ عقل مند افراد بدلہ لینے کے بجائے موجودہ اور مستقبل کے ساتھ کافی کام لیتے ہیں۔ چونکہ ماضی میں کسی غلط کو صحیح نہیں بنایا جاسکتا ، اس لئے بہتر ہے کہ وہ موجودہ اور مستقبل کو متاثر کرنے کی کوشش پر توجہ دے۔
بیکن کا مزید کہنا ہے کہ کوئی بھی شخص اپنی خاطر میں نقصان اٹھانا نہیں چاہتا ہے اور کسی کو خود سے بہتر بنانے کی کوشش کرنے پر پاگل ہونا اس کے قابل نہیں ہے۔ اگر کوئی شخص اس وجہ سے نقصان پہنچا ہے کہ وہ صرف برا ہے ، ٹھیک ہے ، تو اس کی فطرت ہے ، اور اس کی طبیعت خراب ہے۔
اگر ، بیکن کا استدلال ہے ، کوئی انتقام میں مشغول ہے جس کا کوئی قانونی حل نہیں ہے ، تو پھر یہ انتقام قابل برداشت ہوسکتا ہے ، لیکن اس نے متنبہ کیا ہے کہ بدلہ لینے والے شخص کو یہ یقینی بنانا چاہئے کہ کوئی قانون ایسا نہیں ہے جو اسے سزا دے۔ اور یہ صرف صحیح ہے کہ جس شخص سے بدلہ لینے کی کوشش کی جارہی ہے وہ یہ سمجھتا ہے کہ وہ اس کا ہدف ہے کیونکہ یہ علم اسے اس کی اصل کارروائی پر پچھتا سکتا ہے۔
بیکن نے اس مضمون کی نشاندہی کرتے ہوئے کہا ہے کہ برے رہنماؤں سے عوامی انتقام "زیادہ تر خوش قسمت" ہے لیکن اپنے قاری کو یاد دلاتا ہے کہ نجی انتقام "بدقسمتی" ہے۔

شادی اور سنگل۔

سر فرانسس بیکن نے اپنے مضمون "شادی اور اکیلا زندگی" کے مضمون ، آزادی ، آزادی اور شادی کے موضوعات کو تلاش کیا۔ بیکن سنگل اور شادی شدہ ہونے سے منسلک مثبت اور منفی کی جانچ کرتا ہے۔ بیکن نے اس آزادی پر تبصرہ کیا ہے کہ سنگل ہونے سے وہ افراد ملتے ہیں جو شادی کی رکاوٹوں اور ذمہ داریوں سے آزاد رہنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے یہ بھی بتایا کہ ایک مرد کے پاس خیراتی طریقوں سے معاشرے کو واپس دینے کے لئے وقت اور رقم ہے۔ بیکن کا خیال ہے کہ سنگل مرد اکثر "بہترین دوست ، بہترین ماسٹر ، بہترین نوکر" ہوتے ہیں۔ تاہم ، بیکن یہ بھی لکھتا ہے کہ سنگل ہونا انسان کو "ظالمانہ اور سخت دل" بنا سکتا ہے کیوں کہ وہ اس کوملتا اور پیار سے لطف اندوز نہیں ہوتا جس کا نکاح مرد اکثر کرتے ہیں۔ بیکن نے اس بات کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ ان کا خیال ہے کہ صرف درمیانی عمر کے مردوں کو ہی مناسب وقت پر شادی کرنی چاہئے اور اس پر تبادلہ خیال کیا گیا ہے کہ بیویاں خراب شوہروں سے شادی کا انتخاب کیوں کرتی ہیں۔ بیکن نے تسلیم کیا ہے کہ آزادی سنگل مردوں کو آزادی دیتی ہے جو انھیں معاشرے کی مدد کرنے کا موقع اور سرمایہ مہیا کرتی ہے ، لیکن کچھ خاص حالات میں بھی انہیں قابل رشک بنا سکتی ہے۔ وہ پورے مضمون میں شادی شدہ ہونے کے مثبت اور منفی کو بھی تلاش کرتا ہے۔

دوستی کی

بیکن دوستی کی اہمیت کو مضمر انداز میں قائم کرتا ہے جب وہ کہتا ہے "جو کچھ بھی تنہائی میں خوش ہوتا ہے وہ جنگلی جانور یا دیوتا ہے۔" انہوں نے کہا کہ ، دوستوں کے بغیر ، "اسی دنیا میں ایک صحرا ہے۔" بیکن کا مضمون اس بات پر مرکوز ہے کہ وہ "دوستی کا پھل" کہتا ہے ، جس میں سے تین ہیں ، اور پہلا یہ ہے کہ سننے کے لئے سچے دوست کی مدد سے کسی کی تمام مایوسیوں سے نجات مل سکے۔ بیکن اس دور میں رہتا تھا جب مرد سمجھتے تھے کہ ہمارے جسموں کو "مزاح" زمین ، ہوا ، آگ اور پانی کے ذریعہ کنٹرول کیا جاتا ہے اور اگر مزاح ہمارے جسموں میں متوازن ہوجاتے ہیں تو ہم بیمار ہوجاتے ہیں۔ بیکن دماغ میں توازن کے ل the جسم میں مزاح کے توازن کی تشبیہ دیتا ہے ، اور کوئی اپنے آپ کو اپنے دوست پر دباؤ ڈال کر دماغ میں توازن بحال کرتا ہے۔ مضمون کے اگلے حصے میں کلاسیکی رومن تاریخ میں دوستی اور ناکام دوستی کی ایک طویل بحث ہے ، اور پھر بیکن "دوستی کا دوسرا پھل" بیان کرتا ہے ، جو ہمدرد دوستوں کے ساتھ کسی کے مسائل پر گفتگو کرنے کا نتیجہ ہے ، اور اس عمل میں "بات چیت کرنا اور کسی سے گفتگو کرنا ،" حقیقت میں "خود سے زیادہ عقلمند" ہوجاتا ہے۔ لیکن ، دوسرے پھل میں ایک اور آدھا حصہ ہوتا ہے جو اتنا ہی اہم ہوتا ہے ، اور وہ دوست کی صلاح ہے ، جو ، بیکن کے مطابق ، اپنے اندر سے آنے والی صلاح سے زیادہ "خشک اور پاکیزہ" ہے۔ بیکن دوستی کے تیسرے پھل کا انار سے موازنہ کرتا ہے ، جس کی سینکڑوں دانا ہوتی ہے۔ بیکن کا استدلال ہے کہ بہت ساری چیزیں ایک آدمی اپنے لئے نہیں کرسکتا - اپنی تعریف کریں (معمولی سے) ، مدد کے لئے دعا گو ہیں کہ کوئی دوست اس کے لئے کوئی شرمندگی نہیں کرسکتا ہے۔ یہ دوستی کی بہت سی دانیوں میں سے ہیں جو تیسرے پھل میں مجسم ہیں۔

محبت کی بات کریں

فرانسس بیکن کا مضمون "محبت کا" محبت کے انتہائی پیچیدہ تصور کے بارے میں سوالات اور جوابات کی تفصیلات بیان کرتا ہے۔ مضمون کا آغاز اسٹیج سے پیار کا موازنہ کرتے ہوئے ہوتا ہے۔ بیکن کے مطابق ، محبت اسٹیج کو آئینہ دیتی ہے کیونکہ اس میں مزاح ، سانحہ ، فساد اور غص .ہ بھرا ہوا ہے۔ اسٹیج پر تیار کردہ ڈراموں کی طرح محبت بھی کثیر جہتی ہے
 بیکن نے مزید کہا کہ محبت لوگوں کو بہت مختلف طریقوں سے کام کرنے پر مجبور کرتی ہے۔ لوگ ، جو محبت سے دوچار ہیں ، خود کو "عظیم جذبات" اور "کمزور جذبے" سے بھر پائیں گے۔
شاید بیکن نے مضمون میں جو سب سے سوچا ہوا اشتعال انگیز بیان دیا ہے وہ ہے "یہ کہ محبت کرنا اور دانشمند ہونا ناممکن ہے۔" یہ کسی کو یہ سوچنے پر مجبور کر سکتا ہے کہ محبت میں رہنا انہیں بیوقوف بنا دیتا ہے۔
بیکن محبت کے مختلف پہلوؤں کو پیش کرتا ہے۔ انسان کی فطرت میں ، ایک خفیہ مائل اور حرکت ، دوسروں کی محبت کی طرف ہے۔ یہاں ، بیکن آسانی سے تسلیم کرتا ہے کہ محبت میں ایسی طاقت موجود ہے جس پر کوئی انسان قابو نہیں رکھ سکتا ہے۔ چاہے اس کے ارد گرد کے لوگوں میں بھی محبت ، محبت کی مرضی کے مطابق ، اپنے آپ میں پھیل گیا۔

والدین اور بچوں کے بارے میں گفتگو کریں

والدین کے اپنے بچوں کے لئے ہر طرح کے جذبات اور احساسات ، خواہ خوشی ہو ، غم ہو ، یا خوف ، وہ نجی اور ذاتی ہیں جو وہ دوسروں کے ساتھ شریک نہیں کرتے ہیں۔ بچوں کی وجہ سے والدین کے لئے سخت مشقت برداشت کرنا آسان ہوجاتا ہے جس سے ان کے بچوں کو فائدہ ہوگا اور ان کا خوشحال مستقبل یقینی بنتا ہے۔ تاہم ، والدین کے لئے ، ان مشکلات کو برداشت کرنا مشکل ہے کیونکہ وہ سمجھتے ہیں کہ یہ مشکلات یا آفات ان کے بچوں کی فلاح و بہبود میں رکاوٹ ہوں گی۔
 بعض اوقات یہ دیکھا جاتا ہے کہ والدین اپنے تمام بچوں کے ساتھ یکساں پیار کے ساتھ سلوک نہیں کرتے ہیں۔ وہ ان کے درمیان امتیازی سلوک کرتے ہیں جس کو ترجیح نہیں دی جاتی ہے ، خاص کر ماں کی طرف سے۔ بیکن نے اس دلیل کو سلومون کے ایک اقتباس سے پکایا کہ اگر کوئی بیٹا کوئی تعریف کرنے والا کام کرتا ہے تو وہ باپ کا بیٹا ہے لیکن اگر بیٹا کوئی شرمناک کام کرتا ہے تو وہ ماں کا بیٹا ہے۔ والدین کا فرض ہے کہ وہ جلد سے جلد اپنے بچوں کے لئے صحیح پیشہ کا انتخاب کریں۔ تاہم ، اگر کوئی بچہ بڑا ہوتا ہے اور بالکل مختلف پیشہ میں دلچسپی ظاہر کرتا ہے تو ، والدین کو ان پر اپنا انتخاب مسلط نہیں کرنا چاہئے۔ انہیں انہیں اپنے راستے پر جانے کی اجازت دینی چاہئے۔
چھوٹے بچے عام طور پر خوش قسمت ہوتے ہیں کیونکہ انہیں اپنے بڑے بھائیوں کی طرف سے سخت محنت کی ترغیب ملتی ہے۔ تاہم ، سخت محنت کی ترغیب اس جگہ سے کم ہوجاتی ہے جہاں بڑے بھائی کی بدنامی ہوتی ہے اور چھوٹا بچہ والدین سے دولت سے فائدہ اٹھانے والے تمام افراد کو حاصل کرنے کی امید کرتا ہے۔

مطالعہ کے بارے میں تبادلہ خیال کریں

مطالعات کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے ، بیکن کا مضمون ایک فرد کی روزمرہ کی زندگی میں مطالعہ کے کردار کو واضح کرتا ہے۔ بیکن کے لئے ، مطالعہ ہمیشہ عملی زندگی میں علم کے اطلاق سے متعلق ہے۔ اپنے مضمون کے آغاز میں ، بیکن مطالعے کے تین اہم مقاصد کو بیان کرتا ہے جن میں خوشی حاصل کرنے کے لئے مطالعہ ، اپنی زندگی کو زیور بنانے کے لئے کیے جانے والے مطالعات اور اپنی صلاحیت کو بہتر بنانے کے ل studying مطالعہ کرنا شامل ہے۔
مصنف کا خیال ہے کہ صرف سیکھے اور پڑھے لکھے آدمی ہی منصوبوں کو موثر انداز میں انجام دے سکتے ہیں ، مہارت سے اپنے روزمرہ کے امور کا نظم و نسق اور صحت مند اور مستحکم زندگی گزار سکتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا ہے کہ پڑھنے سے پورا آدمی بن جاتا ہے۔ کانفرنس ایک تیار آدمی کی طرف جاتا ہے جب تحریر ایک عین آدمی بناتا ہے۔ بیکن بھی مطالعے کے کچھ برتاؤ کو آگے رکھتا ہے کیونکہ اس کے خیال میں طویل عرصے تک مطالعہ کرنا سست روی کا باعث بن سکتا ہے۔
انہوں نے ارد گرد کی فطرت سے سیکھے بغیر صرف کتابوں سے مطالعہ کرنے کی بھی مذمت کی۔ اس مضمون کو انسانی دماغ کے نقائص اور ایک کی عقل کو بڑھانے کے ذریعہ کے ل of ایک دوا کے طور پر غور کرکے مطالعہ کا مضمون مزید مطالعہ کرتا ہے۔ کسی فرد کی زندگی میں مطالعہ کی اہمیت پر تبادلہ خیال کرتے ہوئے ، مضمون نگار اپنے قارئین کو اچھی کتابیں پڑھنے کے فوائد سے آگاہ کرتا ہے۔
بیکن کے لئے ، کچھ کتابیں صرف چکھنے کے لئے ہیں۔ کچھ دیگر نگلنے کے لئے موجود ہیں جبکہ کچھ کتابیں صحیح طریقے سے چبانے اور ہضم کرنے کے لئے ہیں۔ لہذا ، قارئین کو کسی بھی کتاب کا مطالعہ کرنے سے پہلے پوری دنیا کے بارے میں اپنے علم میں اضافہ کرنے کے لئے دانشمندی کا انتخاب کرنا چاہئے۔ بیکن نے اپنے مضمون کو یہ تجویز کرتے ہوئے اختتام کیا کہ مطالعات فرد کو اس کے ذہن کے نقائص دور کرنے میں معاون ہوتی ہیں کیوں کہ انسانی دماغ کا ہر مسئلہ فرد اور دنیا کے لئے خاص اہمیت رکھتا ہے۔

جوانی اور عمر کے بارے میں گفتگو کریں

اس مضمون میں بیکن نوجوان اور بڑھاپے کی خصوصیات کو موازنہ کرنے کی کوشش کرتا ہے۔ مضمون کے آغاز میں بیکن نے اس بات کا تذکرہ کیا ہے کہ کسی نوجوان کے لئے یہ ممکن ہے کہ وہ کسی بوڑھے آدمی کی پختگی ہو ، لیکن ان کا کہنا ہے کہ یہ ایک بہت ہی نایاب واقعہ ہے۔ وہ نوجوانوں کا موازنہ پہلے آئیڈیاز یا افکار سے کرتا ہے اور کہتا ہے کہ وہ کبھی بھی سیکنڈ کی طرح عقل مند نہیں ہوتے ہیں۔ لیکن پھر ، نوجوانوں کی نئی ایجادات یا دریافتیں بوڑھے لوگوں کی نسبت زیادہ تازگی معلوم ہوتی ہیں کیونکہ ان کا تخیل بہتر ہے۔ اگرچہ نوجوان خواہشات اور عزائم سے بھر پور ہیں لیکن وہ ان خواہشات پر عمل کرنے کے لئے کافی حد تک پختہ نہیں ہوئے جب تک کہ وہ ایک خاص عمر کے نہ ہوں۔ ان کا کہنا ہے کہ نوجوان اور عمر رسیدہ دونوں خصوصیات ہیں جو انوکھی ہیں جیسے نوجوان مرد ایجاد کرنا بہتر ہیں ، بوڑھا مرد فیصلہ کرنا بہتر ہے ، جوان مرد خطرات کا حساب لگانے میں بہتر ہیں ، جوان نئے منصوبوں کے لئے بہتر ہیں ، آباد کاروبار کے لئے بوڑھے مرد.
ان کا کہنا ہے کہ نوجوان جوش و خروش اور نئے آئیڈیوں سے بھرے ہوئے ہیں ، کبھی خاموش نہیں رہتے ، تبدیلی پیدا کرنے کے لئے تیار ہیں اور فطرت میں جدید ہیں۔ یہاں تک کہ اگر ان کی کوششیں ناکام ہوجائیں تو وہ ٹھوکریں نہ کھا لیتے ہیں ، تب تک وہ جاری رکھتے ہیں جب تک کہ وہ ان کا نتیجہ تلاش نہیں کر پاتے۔ وہ ایک مستحکم گھوڑے کی مانند ہیں جیسے اس کا کہنا ہے ، جو نہ رکتا ہے اور نہ موڑتا ہے۔ اگرچہ عمر رسیدہ افراد اس کے بالکل برعکس ہیں ، وہ بہت زیادہ سوچتے ہیں اور صلاح مشورہ کرتے ہیں ، اور بہادر ہونے کے لئے بھی مستحکم ہیں اور آخر میں کامیابی کی کم سے کم شرح سے خوش ہیں جو ان کو حاصل ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ نوجوانوں کے پاس نظارے ہیں جبکہ بوڑھے کے خواب ہیں جو سابق کے مقابلے میں اتنے اچھے نہیں ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ کچھ ایسے لوگ بھی ہیں جو اپنی عمر سے آگے سوچتے ہیں لیکن ان کی عمر کے ساتھ ساتھ اس میں بھی کمی آ جاتی ہے ، جو جوانی میں عمر سے بہتر فضل رکھتے ہیں۔

Post a Comment

0 Comments